مسافر راستے میں ہے ابھی تک

خالد عبادی

مسافر راستے میں ہے ابھی تک

خالد عبادی

MORE BYخالد عبادی

    مسافر راستے میں ہے ابھی تک

    نہیں پہنچا اجالا تیرگی تک

    گلوں میں چاند کھلنے کے یہ دن ہیں

    مگر کھلتی نہیں ہے اک کلی تک

    ذرا سا درد اور اتنی دوائیں

    پسند آئی نہیں چارہ گری تک

    برہنہ جسم پر دو چار دھبے

    تماشا دیکھتے ہیں اجنبی تک

    وہ ایسی قیمتی شے بھی نہیں تھی

    لٹی تو یاد آتی ہے ابھی تک

    لکھا خنجر سے تیرا نام دل پر

    ہمیں آتی نہیں دیوانگی تک

    اسے تصویر کرنے کی لگن میں

    عبادیؔ بھول بیٹھے خودکشی تک

    مأخذ :
    • کتاب : khush ahjaar (Pg. 85)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY