مسلسل ایک ہی تصویر چشم تر میں رہی

یاسمین حمید

مسلسل ایک ہی تصویر چشم تر میں رہی

یاسمین حمید

MORE BYیاسمین حمید

    مسلسل ایک ہی تصویر چشم تر میں رہی

    چراغ بجھ بھی گیا روشنی سفر میں رہی

    رہ حیات کی ہر کشمکش پہ بھاری ہے

    وہ بیکلی جو ترے عہد مختصر میں رہی

    خوشی کے دور تو مہماں تھے آتے جاتے رہے

    اداسی تھی کہ ہمیشہ ہمارے گھر میں رہی

    ہمارے نام کی حق دار کس طرح ٹھہرے

    وہ زندگی جو مسلسل ترے اثر میں رہی

    نئی اڑان کا رستہ دکھا رہی ہے ہمیں

    وہ گرد پچھلے سفر کی جو بال و پر میں رہی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY