مصیبت سر سے ٹلتی جا رہی ہے

طاہر عدیم

مصیبت سر سے ٹلتی جا رہی ہے

طاہر عدیم

MORE BYطاہر عدیم

    مصیبت سر سے ٹلتی جا رہی ہے

    ہماری عمر ڈھلتی جا رہی ہے

    کہاں ہے زندگی اب زندگی میں

    فقط اک نبض چلتی جا رہی ہے

    مسلسل بھاپ بن کر اڑ رہا ہوں

    مسلسل آگ جلتی جا رہی ہے

    عجب ہے سانحہ جینے کی خواہش

    مرے دل سے نکلتی جا رہی ہے

    خفا کیوں ہیں مرے حالات مجھ سے

    ہوا کیوں رخ بدلتی جا رہی ہے

    یہ سانسیں معجزے میں ڈھل رہی ہیں

    کرامت خوں میں چلتی جا رہی ہے

    سوا نیزے پہ سورج آ رہا ہے

    مری ہر سمت گلتی جا رہی ہے

    مجھے دھر کر میرے بے در مکاں میں

    وہ گھر کو ہاتھ ملتی جا رہی ہے

    یہ کیسے ڈنک ہیں سینے میں طاہرؔ

    حلق میں جاں اچھلتی جا رہی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے