مسکرانے کی ادا مجھ کو سکھاتی ہے غزل

کمال جعفری

مسکرانے کی ادا مجھ کو سکھاتی ہے غزل

کمال جعفری

MORE BYکمال جعفری

    مسکرانے کی ادا مجھ کو سکھاتی ہے غزل

    کوئی مشکل ہو مرا ساتھ نبھاتی ہے غزل

    داستاں حسن و محبت کی سناتی ہے غزل

    ہم نوا اپنا زمانے کو بناتی ہے غزل

    نیند اڑ جاتی ہے راتوں کو جو آنکھوں سے کبھی

    اپنی آغوش محبت میں سلاتی ہے غزل

    غم سے آزاد بشر ہوتا ہے سنتے ہی اسے

    اہل محفل پہ اثر ایسا جماتی ہے غزل

    کیسے کہہ دوں کہ ہے محدود غزل کی دنیا

    شان اردو کی زمانے میں بڑھاتی ہے غزل

    پھیلتا ہے رہ ہستی میں اندھیرا تو کمالؔ

    فکر و احساس کی اک شمع جلاتی ہے غزل

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY