Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

نہ باتیں کیں نہ تسکیں دی نہ پہلو میں ذرا ٹھہرے

رونق ٹونکوی

نہ باتیں کیں نہ تسکیں دی نہ پہلو میں ذرا ٹھہرے

رونق ٹونکوی

MORE BYرونق ٹونکوی

    نہ باتیں کیں نہ تسکیں دی نہ پہلو میں ذرا ٹھہرے

    جو تم آئے تو کیا آئے جو تم ٹھہرے تو کیا ٹھہرے

    کسی کا رنگ الفت کیا جمے واں یہ بھی مشکل ہے

    کہ ان کے دست و پا میں ایک دم رنگ حنا ٹھہرے

    دل مضطر بشکل برق دم لینے نہیں دیتا

    مجھے آرام آ جائے جو پہلو میں ذرا ٹھہرے

    وفاداری ہوئی بے کار مرنا کھیل آ ٹھہرا

    خدا جانے کہ اب کیا رنگ آئین وفا ٹھہرے

    دماغ ایسا ہی کچھ نازک جلیں ایسے ہی کچھ بد گو

    کہوں اک حرف مطلب اور واں اک ماجرا ٹھہرے

    چمن میں آگ سی پیراہن گل سے بھڑک اٹھی

    فغاں سے ایک دم تو بلبل آتش نوا ٹھہرے

    اگر جانا ہی ٹھہرا ہے تو اچھا دل بھی لے جاؤ

    کسی پہلو کسی صورت تو جان مبتلا ٹھہرے

    کبھی شادی کبھی غم ہے کبھی کچھ اور عالم ہے

    دل اک مہماں سرا ہے اس میں رونقؔ کوئی آ ٹھہرے

    مأخذ :
    • کتاب : intekhaabe-e-sukhan(jild-duum) (Pg. 124)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے