نہ فقط یار بن شراب ہے تلخ

بیاں احسن اللہ خان

نہ فقط یار بن شراب ہے تلخ

بیاں احسن اللہ خان

MORE BYبیاں احسن اللہ خان

    نہ فقط یار بن شراب ہے تلخ

    عیش و آرام و خورد و خواب ہے تلخ

    میٹھی باتیں کدھر گئیں پیارے

    اب تو ہر بات کا جواب ہے تلخ

    ساتھ دینا یہ بوسہ و دشنام

    قند شیریں ہے اور گلاب ہے تلخ

    دل ہی سمجھے ہے اس حلاوت کو

    گو بہ ظاہر ترا عتاب ہے تلخ

    دل سے مستوں کے کوئی پوچھے بیاں

    زاہدوں کو شراب ناب ہے تلخ

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    نہ فقط یار بن شراب ہے تلخ فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY