نہ سر چھپانے کو گھر تھا نہ آب و دانہ تھا

حیدر علی جعفری

نہ سر چھپانے کو گھر تھا نہ آب و دانہ تھا

حیدر علی جعفری

MORE BYحیدر علی جعفری

    نہ سر چھپانے کو گھر تھا نہ آب و دانہ تھا

    زمانے بھر کی نگاہوں کا میں نشانہ تھا

    بھلا نہ پایا اسے جس کو بھول جانا تھا

    وفاؤں سے مرا رشتہ بہت پرانا تھا

    جو عکس غیر کی تابش میں ڈھونڈتا تھا جلا

    اس آئینے کو بکھرنا تھا ٹوٹ جانا تھا

    دریچے ماضی کے کھلنے لگے تو یاد آیا

    یہیں کہیں کسی ڈالی پہ آشیانہ تھا

    صلے میں کیا مجھے ملتا جو اور رک جاتا

    ترے خطوط کو اک روز تو جلانا تھا

    جہاں پہ طائر فکر سخن کے پر سلتے

    وہیں پہ عقل و خرد کا نیا ٹھکانا تھا

    لہو کا رنگ چٹانوں کے آبشاروں میں

    انہیں نشیب میں دریائے خوں بہانا تھا

    قبائے سرخ سیہ بادلوں نے اوڑھی تھی

    کسی کے جرم سے پردہ انہیں اٹھانا تھا

    وہ ایک ہلکے تبسم کی کاٹ سہ نہ سکا

    ستم کا وار بھی کس درجہ بزدلانہ تھا

    تمام شورشیں سفاکیاں عروج پہ تھیں

    بالآخر ان کو عدالت سے چھوٹ جانا تھا

    دکاں لگائے ہوں ٹوٹے ہوئے کھلونے کی

    کہ بھولتا نہیں بچپن بھی کیا زمانہ تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY