نہ شہر میں نہ کسی دشت ہو میں خاک ہوئے

خورشید طلب

نہ شہر میں نہ کسی دشت ہو میں خاک ہوئے

خورشید طلب

MORE BYخورشید طلب

    نہ شہر میں نہ کسی دشت ہو میں خاک ہوئے

    ہمارے خواب ہمارے لہو میں خاک ہوئے

    کسی کے ہاتھ لگا کب وہ ماہتاب بدن

    کئی جیالے وہیں جستجو میں خاک ہوئے

    دھواں سا اٹھتا ہے دل سے جو سوچتا ہوں کبھی

    وہ کون تھے جو مری آرزو میں خاک ہوئے

    تھے کتنے گیت جو آواز کو ترستے رہے

    ہزار راگ رگ خوش گلو میں خاک ہوئے

    اب اس سے اچھا بھلا اختتام کیا ہوتا

    اٹھے تھے میں سے مگر جا کے تو میں خاک ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY