نہ تھیں تو دور کہیں دھیان میں پڑی ہوئی تھیں

ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

نہ تھیں تو دور کہیں دھیان میں پڑی ہوئی تھیں

ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

MORE BY ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

    نہ تھیں تو دور کہیں دھیان میں پڑی ہوئی تھیں

    تمام آیتیں امکان میں پڑی ہوئی تھیں

    کواڑ کھلنے سے پہلے ہی دن نکل آیا

    بشارتیں ابھی سامان میں پڑی ہوئی تھیں

    وہیں شکستہ قدمچوں پہ آگ روشن تھی

    وہیں روایتیں انجان میں پڑی ہوئی تھیں

    ہم اپنے آپ سے بھی ہم سخن نہ ہوتے تھے

    کہ ساری مشکلیں آسان میں پڑی ہوئی تھیں

    پس چراغ میں جو سمتیں ڈھونڈتا رہا ترکؔ

    وہ ایک لفظ کے دوران میں پڑی ہوئی تھیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites