نہ وہ خزاں رہی باقی نہ وہ بہار رہی

اختر شیرانی

نہ وہ خزاں رہی باقی نہ وہ بہار رہی

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    نہ وہ خزاں رہی باقی نہ وہ بہار رہی

    رہی تو میری کہانی ہی یادگار رہی

    وہی نظر ہے نظر جو بایں ہمہ پستی

    ستارہ گیر رہی کہکشاں شکار رہی

    شب بہار میں تاروں سے کھیلنے والے

    کسی کی آنکھ بھی شب بھر ستارہ بار رہی

    تمام عمر رہا گرچہ میں تہی پہلو

    بسی ہوئی مرے پہلو میں بوئے یار رہی

    کوئی عزیز نہ ٹھہرا ہمارے دفن کے بعد

    رہی جو پاس تو شمع سر مزار رہی

    وہ پھول ہوں جو کھلا ہو خزاں کے موسم میں

    تمام عمر مجھے حسرت بہار رہی

    کبھی نہ بھولیں گی اس شب کی لذتیں اخترؔ

    کہ میرے سینے پہ وہ زلف مشکبار رہی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY