نہ یہ شیشہ نہ یہ ساغر نہ یہ پیمانہ بنے

اصغر گونڈوی

نہ یہ شیشہ نہ یہ ساغر نہ یہ پیمانہ بنے

اصغر گونڈوی

MORE BYاصغر گونڈوی

    نہ یہ شیشہ نہ یہ ساغر نہ یہ پیمانہ بنے

    جان مے خانہ تری نرگس مستانہ بنے

    پرتو رخ کے کرشمے تھے سر راہ گزر

    ذرے جو خاک سے اٹھے وہ صنم خانہ بنے

    کار فرما ہے فقط حسن کا نیرنگ کمال

    چاہے وہ شمع بنے چاہے وہ پروانہ بنے

    اس کو مطلوب ہیں کچھ قلب و جگر کے ٹکڑے

    جیب و دامن نہ کوئی پھاڑ کے دیوانہ بنے

    رند جو ظرف اٹھا لیں وہی ساغر بن جائے

    جس جگہ بیٹھ کے پی لیں وہی مے خانہ بنے

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 06.02.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY