نالہ رکتا ہے تو سر گرم جفا ہوتا ہے

مرزا ہادی رسوا

نالہ رکتا ہے تو سر گرم جفا ہوتا ہے

مرزا ہادی رسوا

MORE BY مرزا ہادی رسوا

    نالہ رکتا ہے تو سر گرم جفا ہوتا ہے

    درد تھمتا ہے تو بے درد خفا ہوتا ہے

    پھر نظر جھینپتی ہے آنکھ جھکی جاتی ہے

    دیکھیے دیکھیے پھر تیر خطا ہوتا ہے

    عشق میں حسرت دل کا تو نکلنا کیسا

    دم نکلنے میں بھی کم بخت مزا ہوتا ہے

    حال دل ان سے نہ کہتا تھا ہمیں چوک گئے

    اب کوئی بات بنائیں بھی تو کیا ہوتا ہے

    آہ میں کچھ بھی اثر ہو تو شرر بار کہوں

    ورنہ شعلہ بھی حقیقت میں ہوا ہوتا ہے

    ہجر میں نالہ و فریاد سے باز آ رسواؔ

    ایسی باتوں سے وہ بے درد خفا ہوتا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 458)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956 )
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY