ندی تھی کشتیاں تھیں چاندنی تھی جھرنا تھا

شہرام سرمدی

ندی تھی کشتیاں تھیں چاندنی تھی جھرنا تھا

شہرام سرمدی

MORE BYشہرام سرمدی

    ندی تھی کشتیاں تھیں چاندنی تھی جھرنا تھا

    گزر گیا جو زمانہ کہاں گزرنا تھا

    مجھی کو رونا پڑا رت جگے کا جشن جو تھا

    شب فراق وہ تارہ نہیں اترنا تھا

    مرے جلال کو کرنا تھا خم سر تسلیم

    ترے جمال کا شیرازہ بھی بکھرنا تھا

    ترے جنون نے اک نام دے دیا ورنہ

    مجھے تو یوں بھی یہ صحرا عبور کرنا تھا

    اک ایسا زخم کہ جس پر خزاں کا سایہ نہ تھا

    اک ایسا پل کہ جو ہر حال میں ٹھہرنا تھا

    مآخذ:

    • کتاب : Na Mau'ud (Pg. 140)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY