نئے سفر کی لذتوں سے جسم و جاں کو سر کرو

مہتاب حیدر نقوی

نئے سفر کی لذتوں سے جسم و جاں کو سر کرو

مہتاب حیدر نقوی

MORE BYمہتاب حیدر نقوی

    نئے سفر کی لذتوں سے جسم و جاں کو سر کرو

    سفر میں ہوں گی برکتیں سفر کرو سفر کرو

    اداس رات کے گداز جسم کو ٹٹول کر

    کسی کی زلف سایہ دار کی گرہ میں گھر کرو

    جو آنکھ ہو تو دیکھ تو سراب ہی سراب ہے

    نہ اعتبار تشنگی میں موج آب پر کرو

    پرانی آستین سے پرانے بت کرو رہا

    نئی زمین پر نئے خدا کو معتبر کرو

    جمال یار سے کرو کبھی نظر کو پاک بھی

    خیال یار سے کبھی کبھی شبیں سحر کرو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY