نفس نفس ہے ترے غم سے چور چور اب تک

شاذ تمکنت

نفس نفس ہے ترے غم سے چور چور اب تک

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    نفس نفس ہے ترے غم سے چور چور اب تک

    نہ شام ہے نہ سویرا قریب دور اب تک

    سنی سنائی پہ مت جا ذرا قریب تو آ

    سزا نہ دے کہ محبت ہے بے قصور اب تک

    مچل رہی ہے کہیں جوئے شیر اے فرہاد

    کلیم سن تو سہی جل رہا ہے طور اب تک

    مرے خدا میں کہاں جاؤں کس طرح ڈھونڈوں

    مجھے پکار رہا ہے کوئی ضرور اب تک

    نہ تو مرا نہ تری ہم نشینیاں میری

    بھرم ہے جس کو سمجھتے ہیں سب غرور اب تک

    ادھر وفور محبت ادھر مروت تھی

    جو کچھ کہا تھا بھلا دے ترے حضور اب تک

    چلا گیا ہے مکیں چھوڑ کر مکاں اپنا

    کوئی نہیں ہے مگر چھن رہا ہے نور اب تک

    وہ ایک حادثۂ روح و دل کہ بیت گیا

    جسے نہ مان سکا شاذؔ کا شعور اب تک

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY