نفس سرکش کو قتل کر اے دل

امداد علی بحر

نفس سرکش کو قتل کر اے دل

امداد علی بحر

MORE BYامداد علی بحر

    نفس سرکش کو قتل کر اے دل

    مستعد ہو جہاد پر اے دل

    نہ پھلے گی تجارت دنیا

    ہے یہاں نفع میں ضرر اے دل

    تیرے کردار پر ہیں شاہد حال

    خشک لب اور چشم تر اے دل

    نہ رو الفت نہ ہاتھ سے جائے

    کھیل جا اپنی جان پر اے دل

    چاہیے بے محل نہ ٹپکے اشک

    ابروؤں پر رہے نظر اے دل

    بے خودی میں نکل چلا ہے کدھر

    بھول جانا نہ اپنا گھر اے دل

    کوئے جاناں ہے مقتل عشاق

    لے چلا ہے مجھے کدھر اے دل

    جان جانی ہے تجھ کو ہوش نہیں

    تو بھی کتنا ہے بے خبر اے دل

    عشق بازی ہے آبرو ریزی

    اپنے فعلوں سے درگزر اے دل

    کیوں نکل کر ذلیل ہوتی ہے

    تیری فریاد بے اثر اے دل

    دھیان آٹھوں پہر اسی کا ہے

    کبھی اپنی بھی لی خبر اے دل

    عشق کے معرکے میں مار قدم

    فتح ہے تیرے نام پر اے دل

    اشک ہو کر بہا کہ خون ہوا

    کیا ہوئی حالت جگر اے دل

    غم عالم ہے تیرے حصے میں

    تو بھی کیا ہے نصیب ور اے دل

    تو اگر آگ ہے وہ پانی ہے

    بحرؔ کے شر سے خوف کر اے دل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY