نغمہ ایسا بھی مرے سینۂ صد چاک میں ہے

سید عابد علی عابد

نغمہ ایسا بھی مرے سینۂ صد چاک میں ہے

سید عابد علی عابد

MORE BYسید عابد علی عابد

    نغمہ ایسا بھی مرے سینۂ صد چاک میں ہے

    خوف سے حشر بپا گنبد افلاک میں ہے

    اے جنوں چل خم گیسو کی طرف دل تو ابھی

    عالم خواب میں آداب کے پیچاک میں ہے

    وہ قفس ہو کہ نشیمن کہ پنہ گاہ نہیں

    طائرو نغمہ گرو برق بلا تاک میں ہے

    تیرے خوش پوش فقیروں سے وہ ملتے تو سہی

    جو یہ کہتے ہیں وفا پیرہن چاک میں ہے

    یہ تصور ہے ابھی عرش ابھی فرش پہ تھا

    رنگ و نیرنگ اسی توسن چالاک میں ہے

    کیا بنے صورت اظہار معنی کہ خیال

    ابھی الجھا ہوا الفاظ کے پیچاک میں ہے

    در اخلاص کی دہلیز پہ خم ہوں عابدؔ

    ایک جینے کا سلیقہ دل بے باک میں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY