نہیں ہے روٹی میسر اگر ہوا تو ہے

محمد صادق جمیل

نہیں ہے روٹی میسر اگر ہوا تو ہے

محمد صادق جمیل

MORE BYمحمد صادق جمیل

    نہیں ہے روٹی میسر اگر ہوا تو ہے

    خدا کا شکر کہ کھانے کو کچھ بچا تو ہے

    نہ بادبان نہ کشتی کا ناخدا کوئی

    میں مطمئن ہوں محافظ مرا خدا تو ہے

    یہ اور بات نہ ارسال کر سکوں تم کو

    تمہارے نام مگر ایک خط لکھا تو ہے

    اسی کے نام کی تختی لگائی ہے دل پر

    مقیم اس میں وہ آخر کبھی رہا تو ہے

    کھلا جو پھول تو خوشبو نکل گئی ساری

    بھرے چمن میں کوئی حادثہ ہوا تو ہے

    خدا کرے کہ یہ اب ان کے شہر سے گزرے

    ہوا کے دوش پہ مکتوب اک رکھا تو ہے

    وہ میرے نام پہ صادق جمیلؔ یوں بولے

    بھلا سا نام یہ میں نے کہیں سنا تو ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY