نہیں ملتا دلا ہم کو نشاں تک

میاں داد خاں سیاح

نہیں ملتا دلا ہم کو نشاں تک

میاں داد خاں سیاح

MORE BYمیاں داد خاں سیاح

    نہیں ملتا دلا ہم کو نشاں تک

    مکاں ڈھونڈ آئے اس کا لا مکاں تک

    بنا ہر موئے تن خار مغیلاں

    ستایا جوش وحشت نے یہاں تک

    ہماری جان کے پیچھے پڑا ہے

    دل ناداں کو سمجھائیں کہاں تک

    رواں شب کو ہوا کیا ناقۂ روح

    نظر آئی نہ گرد کارواں تک

    زمیں پہ زلزلہ آیا تو پہنچا

    مرے نالوں کا غوغا آسماں تک

    ملے ہے دل کو ذوق بوسۂ لب

    مزا ہے ورنہ ہر شے کا زباں تک

    جو رکھتے تھے دماغ اپنا فلک پر

    زمیں پر اب نہیں ان کا نشاں تک

    جلایا شمع سا اس شعلہ رو نے

    گئے گھل سوز غم سے استخواں تک

    جہاں کی سیر کی سیاحؔ ہم نے

    نہ پہنچے پر سخن کے قدرداں تک

    مآخذ :
    • کتاب : Miyadad Khan Saiyyah (Pg. 82)
    • کتاب : Gujrat Urdu Sahitya Acadami (Pg. 82)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY