نئی زبان ملی ہے سو ایسا بولتے ہیں

امن شہزادی

نئی زبان ملی ہے سو ایسا بولتے ہیں

امن شہزادی

MORE BYامن شہزادی

    نئی زبان ملی ہے سو ایسا بولتے ہیں

    شروع میں تو سبھی الٹا سیدھا بولتے ہیں

    خدا کرے کہ کبھی بات بھی نہ کر پائیں

    یہ جتنے لوگ تیرے آگے اونچا بولتے ہیں

    اسے کہا تھا کہ لوگوں سے گفتگو نہ کرے

    اب اس کے شہر کے سب لوگ میٹھا بولتے ہیں

    کسی سے بولنا باقاعدہ نہیں سیکھا

    بس ایک روز یوں ہی خود سے سوچا بولتے ہیں

    نکل کے شور سے آئی تھی اک درخت تلے

    مگر یہاں تو پرندے بھی کتنا بولتے ہیں

    ہم ایسے لوگ کوئی بات دل میں رکھتے نہیں

    کسی سے کوئی گلہ ہو تو سیدھا بولتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY