نئی زمین نئے آسماں سنورتے رہیں

کبیر اجمل

نئی زمین نئے آسماں سنورتے رہیں

کبیر اجمل

MORE BYکبیر اجمل

    نئی زمین نئے آسماں سنورتے رہیں

    یہی ہے شرط تو پھر حرف حرف مرتے رہیں

    یہی سزا ہے کہ لمحوں کی بازگشت کے بعد

    صدی صدی ترے کوچے میں بین کرتے رہیں

    وہ انقلاب لکیروں سے جو ابھر نہ سکا

    کہاں تلک اسی خاکے میں رنگ بھرتے رہیں

    کچھ اور چاہئے دیوانگی کو حد جنوں

    کچھ اور عرصۂ محشر کہ ہم گزرتے رہیں

    کوئی صدا کوئی آوازۂ جرس ہی سہی

    کوئی بہانہ کہ ہم جاں نثار کرتے رہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY