نیا ہے شہر نئے آسرے تلاش کروں

محسن نقوی

نیا ہے شہر نئے آسرے تلاش کروں

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    نیا ہے شہر نئے آسرے تلاش کروں

    تو کھو گیا ہے کہاں اب تجھے تلاش کروں

    جو دشت میں بھی جلاتے تھے فصل گل کے چراغ

    میں شہر میں بھی وہی آبلے تلاش کروں

    تو عکس ہے تو کبھی میری چشم تر میں اتر

    ترے لیے میں کہاں آئنے تلاش کروں

    تجھے حواس کی آوارگی کا علم کہاں

    کبھی میں تجھ کو ترے سامنے تلاش کروں

    غزل کہوں کبھی سادہ سے خط لکھوں اس کو

    اداس دل کے لیے مشغلے تلاش کروں

    مرے وجود سے شاید ملے سراغ ترا

    کبھی میں خود کو ترے واسطے تلاش کروں

    میں چپ رہوں کبھی بے وجہ ہنس پڑوں محسنؔ

    اسے گنوا کے عجب حوصلے تلاش کروں

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY