نظر کسی کو وہ موئے کمر نہیں آتا

میر کلو عرش

نظر کسی کو وہ موئے کمر نہیں آتا

میر کلو عرش

MORE BYمیر کلو عرش

    نظر کسی کو وہ موئے کمر نہیں آتا

    برنگ تار نظر ہے نظر نہیں آتا

    زمانۂ غم فرقت بسر نہیں آتا

    اجل بھی آتی نہیں یار اگر نہیں آتا

    ہمیشہ ہوں بھی میں روتا برنگ شبنم و ابر

    گلی سے کون ترے چشم تر نہیں آتا

    یہ ہے نگاہ سے در پردہ تیغ زن قاتل

    کہ التیام یہ زخم جگر نہیں آتا

    غم فراق میں مر مر کے روز جیتا ہوں

    وہ کون شب ہے جو منہ تک جگر نہیں آتا

    فقط نہ نام سے چلتا ہے کام دنیا میں

    کہ زیر سکہ کبھی گل کا زر نہیں آتا

    وہ لڑ کے ملتے نہیں مل کے ہم پکڑتے نہیں

    وہ صلح کرتے نہیں ہم کو شر نہیں آتا

    فراق زلف میں روز اٹھ کے شب کو روتا ہوں

    کہ سر سے گیسوئے شب تا کمر نہیں آتا

    وہ شاہ حسن خفا ہوئے عرشؔ کہتا ہے

    گرا جو پاؤں پر کیوں اس کا سر نہیں آتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY