نظر میں نت نئی حیرانیاں لیے پھریے

پیرزادہ قاسم

نظر میں نت نئی حیرانیاں لیے پھریے

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    نظر میں نت نئی حیرانیاں لیے پھریے

    سروں پہ روز نیا آسماں لیے پھریے

    اب اس فضا کی کثافت میں کیوں اضافہ ہو

    غبار دل ہے سو دل میں نہاں لیے پھریے

    یہی بچا ہے سو اب زیست کی گواہی میں

    یہی نشان دل بے نشاں لیے پھریے

    قرار جاں تو سر کوئے یار چھوڑ آئے

    متاع زیست ہے لیکن کہاں لیے پھریے

    عجب ہنر ہے کہ دانشوری کے پیکر میں

    کسی کا ذہن کسی کی زباں لیے پھریے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    پیرزادہ قاسم

    پیرزادہ قاسم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY