نگاہ باغباں کچھ مہرباں معلوم ہوتی ہے

اعزاز افصل

نگاہ باغباں کچھ مہرباں معلوم ہوتی ہے

اعزاز افصل

MORE BYاعزاز افصل

    نگاہ باغباں کچھ مہرباں معلوم ہوتی ہے

    زمیں پر آج شاخ آشیاں معلوم ہوتی ہے

    بلایا جا رہا ہے جانب دار و رسن ہم کو

    مقدر میں حیات جاوداں معلوم ہوتی ہے

    نگاہوں میں ہیں کس کے عارض گل رنگ کے جلوے

    کہ دنیا گلستاں در گلستاں معلوم ہوتی ہے

    مری کشتی کو شکوہ بحر بے پایاں کی تنگی کا

    تجھے ایک آب جو بھی بے کراں معلوم ہوتی ہے

    پہنچ کر آسماں پر بھی تو دیکھو اے زمیں والو

    وہاں سے یہ زمیں بھی آسماں معلوم ہوتی ہے

    مآخذ
    • کتاب : Kalam-e-aizaz afzal (Pg. 115)
    • Author : Aizaz Afzal
    • مطبع : Usmania Book Depot

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY