نگاہ لطف کیا کم ہو گئی ہے

علیم اختر

نگاہ لطف کیا کم ہو گئی ہے

علیم اختر

MORE BYعلیم اختر

    نگاہ لطف کیا کم ہو گئی ہے

    محبت اور محکم ہو گئی ہے

    طبیعت کشتۂ غم ہو گئی ہے

    چراغ بزم ماتم ہو گئی ہے

    مآل ضبط پیہم ہو گئی ہے

    مسرت حاصل غم ہو گئی ہے

    تمنا جب بڑھی ہے اپنی حد سے

    تو مایوسی کا عالم ہو گئی ہے

    نہ جانے کیوں عداوت ہی عداوت ہے

    سرشت ابن آدم ہو گئی ہے

    ہے محو رقص ہر برگ چمن پر

    بڑی بیباک شبنم ہو گئی ہے

    ہنسی ہونٹوں پر آتے آتے اخترؔ

    پیام گریۂ غم ہو گئی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نگاہ لطف کیا کم ہو گئی ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY