نگاہ ساقیٔ نامہرباں یہ کیا جانے

مجروح سلطانپوری

نگاہ ساقیٔ نامہرباں یہ کیا جانے

مجروح سلطانپوری

MORE BYمجروح سلطانپوری

    نگاہ ساقیٔ نامہرباں یہ کیا جانے

    کہ ٹوٹ جاتے ہیں خود دل کے ساتھ پیمانے

    ملی جب ان سے نظر بس رہا تھا ایک جہاں

    ہٹی نگاہ تو چاروں طرف تھے ویرانے

    حیات لغزش پیہم کا نام ہے ساقی

    لبوں سے جام لگا بھی سکوں خدا جانے

    تبسموں نے نکھارا ہے کچھ تو ساقی کے

    کچھ اہل غم کے سنوارے ہوئے ہیں مے خانے

    یہ آگ اور نہیں دل کی آگ ہے ناداں

    چراغ ہو کہ نہ ہو جل بجھیں گے پروانے

    فریب ساقئ محفل نہ پوچھئے مجروحؔ

    شراب ایک ہے بدلے ہوئے ہیں پیمانے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نگاہ ساقیٔ نامہرباں یہ کیا جانے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY