نگار‌ پیکر فردا میں ڈھل کے دیکھتے ہیں

مینو بخشی

نگار‌ پیکر فردا میں ڈھل کے دیکھتے ہیں

مینو بخشی

MORE BY مینو بخشی

    نگار‌ پیکر فردا میں ڈھل کے دیکھتے ہیں

    ہم اپنے وقت سے آگے نکل کے دیکھتے ہیں

    تمہاری آنکھ میں تیور غزل کے دیکھتے ہیں

    اسی لئے تمہیں پہلو بدل کے دیکھتے ہیں

    سنا ہے سرخ رو ہونے کا یہ طریقہ ہے

    سو تیرے عشق کی آتش میں جل کے دیکھتے ہیں

    ہمیں ہیں ایک جو لپٹے ہیں اپنے ماضی سے

    جہاں میں ورنہ سبھی خواب کل کے دیکھتے ہیں

    یہ دیکھتے ہیں کہ کہتے ہیں لوگ کیا ہم کو

    مزاج وقت کے سانچے میں ڈھل کے دیکھتے ہیں

    جمال یار کی تابش ارے معاذ اللہ

    انہیں جو دیکھتے ہیں وہ سنبھل کے دیکھتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY