نیند آتی ہے مگر خواب نہیں آتے ہیں

رمزی آثم

نیند آتی ہے مگر خواب نہیں آتے ہیں

رمزی آثم

MORE BYرمزی آثم

    نیند آتی ہے مگر خواب نہیں آتے ہیں

    مجھ سے ملنے مرے احباب نہیں آتے ہیں

    شہر کی بھیڑ سے خود کو تو بچا لاتا ہوں

    گو سلامت مرے اعصاب نہیں آتے ہیں

    تشنگی دشت کی دریا کو ڈبو دے نہ کہیں

    اس لیے دشت میں سیلاب نہیں آتے ہیں

    ڈوبتے وقت سمندر میں مرے ہاتھ لگے

    وہ جواہر جو سر آب نہیں آتے ہیں

    یا انہیں آتی نہیں بزم سخن آرائی

    یا ہمیں بزم کے آداب نہیں آتے ہیں

    ہم نشیں دیکھ مکافات عمل ہے دنیا

    کام کچھ بھی یہاں اسباب نہیں آتے ہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نیند آتی ہے مگر خواب نہیں آتے ہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY