نیند بھی تیرے بنا اب تو سزا لگتی ہے

مرتضیٰ برلاس

نیند بھی تیرے بنا اب تو سزا لگتی ہے

مرتضیٰ برلاس

MORE BYمرتضیٰ برلاس

    نیند بھی تیرے بنا اب تو سزا لگتی ہے

    چونک پڑتا ہوں اگر آنکھ ذرا لگتی ہے

    فاصلہ قرب بنا قرب بھی ایسا کہ مجھے

    دل کی دھڑکن ترے قدموں کی صدا لگتی ہے

    دشمن جاں ہی سہی دوست سمجھتا ہوں اسے

    بد دعا جس کی مجھے بن کے دعا لگتی ہے

    خود اگر نام لوں تیرا تو لرزتا ہے بدن

    غیر گر بات کرے چوٹ سوا لگتی ہے

    ایسے محبس میں جنم اپنا ہوا ہے کہ مجھے

    ہر دریچے سے بڑی سرد ہوا لگتی ہے

    طنز آمیز نہیں ہے مرا انداز سخن

    تلخ بے شک ہے مگر بات جدا لگتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 440)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (25Edition Nov. Dec. 1986)
    • اشاعت : 25Edition Nov. Dec. 1986

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY