نکل گلاب کی مٹھی سے اور خوشبو بن

جاوید انور

نکل گلاب کی مٹھی سے اور خوشبو بن

جاوید انور

MORE BYجاوید انور

    نکل گلاب کی مٹھی سے اور خوشبو بن

    میں بھاگتا ہوں ترے پیچھے اور تو جگنو بن

    تو میرے درد کی خاموش ہچکیوں میں آ

    تو میرے زخم کی تنہائیوں کا آنسو بن

    میں جھیل بنتا ہوں شفاف پانیوں سے بھری

    تو دوڑ دوڑ تھکا بے قرار آہو بن

    تو میری رات کی تاریکیوں کو گاڑھا کر

    مرے مکان کا تنہا چراغ بھی تو بن

    پھر اس کے بعد سبھی وسعتیں ہماری ہیں

    میں آنکھ بنتا ہوں جاویدؔ اور تو بازو بن

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نکل گلاب کی مٹھی سے اور خوشبو بن نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY