نکہت زلف سے نیندوں کو بسا دے آ کر

اختر شیرانی

نکہت زلف سے نیندوں کو بسا دے آ کر

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    نکہت زلف سے نیندوں کو بسا دے آ کر

    میری جاگی ہوئی راتوں کو سلا دے آ کر

    فکر فردا و غم دوش بھلا دے آ کر

    پھر اسی ناز سے دیوانہ بنا دے آ کر

    عشق کو نغمۂ امید سنا دے آ کر

    دل کی سوئی ہوئی قسمت کو جگا دے آ کر

    کس قدر تیرہ و تاریک ہے دنیائے حیات

    جلوۂ حسن سے اک شمع جلا دے آ کر

    عشق کی چاندنی راتیں مجھے یاد آتی ہیں

    عمر رفتہ کو مری مجھ سے ملا دے آ کر

    زندگی بن کے مرے دل میں سما جا سلمیٰ

    موت اک پردہ ہے یہ پردہ اٹھا دے آ کر

    آگ سی دل میں لگا جاتا ہے تیرا ہر خط

    آ مرے خرمن ہستی کو جلا دے آ کر

    تیری فرقت میں مرے شعر ہیں کتنے غمگیں

    مسکراتی ہوئی نظروں سے ہنسا دے آ کر

    پھر وہی ہم ہوں وہی دن ہوں وہی راتیں ہوں

    عہد رفتہ کو پھر آئینہ دکھا دے آ کر

    شوق نادیدہ میں لذت ہے مگر ناز نہیں

    آ مرے عشق کو مغرور بنا دے آ کر

    شب فرقت پہ مری ہنستے ہیں اے خندۂ نور

    میرے قدموں پہ ستاروں کو گرا دے آ کر

    تشنۂ حسن ہوں اے ساقی مے خانۂ حسن

    اپنے ہونٹوں سے پھر اک جام پلا دے آ کر

    کب تلک رونق شام اودھ اے ماہ رواں

    شام لاہور کو بھی صبح بنا دے آ کر

    ہو چکی سیر بہاراں کدۂ قیصر باغ

    باغ لارنس میں بھی پھول کھلا دے آ کر

    گومتی دیکھ چکی جلوۂ عارض کی بہار

    سطح راوی کو بھی آئینہ بنا دے آ کر

    تیرا رومان نیا خواب ہے اخترؔ کے لیے

    آ اور اس خواب کی تعبیر بتا دے آ کر

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ملکہ پکھراج

    ملکہ پکھراج

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY