نمایاں جب وہ اپنے ذہن کی تصویر کرتا ہے

ابرار کرتپوری

نمایاں جب وہ اپنے ذہن کی تصویر کرتا ہے

ابرار کرتپوری

MORE BY ابرار کرتپوری

    نمایاں جب وہ اپنے ذہن کی تصویر کرتا ہے

    ہر اک اہل محبت کو بہت دلگیر کرتا ہے

    وہ کیوں مسرور ہوتا ہے ہمارا خون بہنے سے

    سر حق کس لیے ظالم تہ شمشیر کرتا ہے

    وفا کا نام لیتا ہے وفا نا آشنا ہو کر

    وہ خود کو انتہائی پارسا تعبیر کرتا ہے

    جسے محروم ہونا ہے وہی ہے مطمئن یارو

    جو ہے نصرت کا طالب ہر قدم تدبیر کرتا ہے

    ہر اک انسان کے اعمال بھی یکساں نہیں ہوتے

    کوئی گھر توڑ دیتا ہے کوئی تعمیر کرتا ہے

    صداقت پر کبھی ان کا اثر ہونے نہیں پاتا

    وہ اپنے کارناموں کی بہت تشہیر کرتا ہے

    کوئی بھی مسئلہ ابرارؔ حل ہونے نہیں پاتا

    مسائل وہ ہمارے صورت کشمیر کرتا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Roshani Takhayyul ki (Pg. 79)
    • Author : Abrar Kiratpuri
    • مطبع : Markaz-e-ilm-o-Danish Qudsiya Manzil (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY