نور سحر کہاں ہے اگر شام غم گئی

مختار صدیقی

نور سحر کہاں ہے اگر شام غم گئی

مختار صدیقی

MORE BYمختار صدیقی

    نور سحر کہاں ہے اگر شام غم گئی

    کب التفات تھا کہ جو خوئے ستم گئی

    پھیرا بہار کا تو برس دو برس میں ہے

    یہ چال ہے خزاں کی جو رک رک کے تھم گئی

    شاید کوئی اسیر ابھی تک قفس میں ہے

    پھر موج گل چمن سے جو با چشم نم گئی

    قبضہ میں جوش گل نہ خزاں دسترس میں ہے

    راحت بھی کب ملی ہے اگر وجہ غم گئی

    ہاں طرح آشیاں بھی انہیں خار و خس میں ہے

    بجلی جہاں پہ خاص بہ رنگ کرم گئی

    ہاں شائبہ گریز کا بھی پیش و پس میں ہے

    وہ بے رخی کہ ناز کا تھی جو بھرم گئی

    اب کائنات اور خداؤں کے بس میں ہے

    اب رہبری میں قدرت دیر و حرم گئی

    جادو غزل کا جذب تمنا کے رس میں ہے

    یعنی وہ دل کی بات دلوں میں جو دم گئی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مختار صدیقی

    مختار صدیقی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے