پاس اس بت کے جو غیر آ کے کوئی بیٹھ گیا

شاد لکھنوی

پاس اس بت کے جو غیر آ کے کوئی بیٹھ گیا

شاد لکھنوی

MORE BYشاد لکھنوی

    پاس اس بت کے جو غیر آ کے کوئی بیٹھ گیا

    درد اٹھا یا مرے جس میں کہ جی بیٹھ گیا

    عشق مژگاں میں ہزاروں نے گلے کٹوائے

    عید قرباں میں جو وہ لے کے چھری بیٹھ گیا

    جب رقیب اس کو بتانے لگے ارکان نماز

    تھام کر دل کبھی اٹھا میں کبھی بیٹھ گیا

    اے جلا ساز کبھی پھر نہ صفائی ہوگی

    زنگ آئینۂ دل میں جو ذرا بیٹھ گیا

    دست و پا ہوتے ہیں ہر وار میں لاکھوں کے دو نیم

    ہاتھ چورنگ پہ مشق اس نے جو کی بیٹھ گیا

    چشمۂ گور وہ ہے اس سے نہ نکلا کوئی

    اس کنوئیں میں جو گرا ڈوبتے ہی بیٹھ گیا

    تھام کیوں کر نہیں لیتے ہیں وہ دل دیکھیں تو

    تیر نالہ جو نشانے پہ کوئی بیٹھ گیا

    پھوٹ بہتا جو یہ اے شادؔ تو بہتر ہوتا

    پھر یہ ابھرے گا پھپھولا جو ابھی بیٹھ گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY