پہلے ہوتا اگر شعور اتنا

سیا سچدیو

پہلے ہوتا اگر شعور اتنا

سیا سچدیو

MORE BYسیا سچدیو

    پہلے ہوتا اگر شعور اتنا

    شیشۂ دل نہ ہوتا چور اتنا

    عشق اس سے ہی تھا ہوا احساس

    ہو گیا جب وہ مجھ سے دور اتنا

    کہہ نہ پائے کہ بے قصور ہیں ہم

    ہو گیا ہم سے بے قصور اتنا

    خواب میں بھی سفر نہیں ہوتا

    جسم ہے اب تھکن سے چور اتنا

    تو بھی مٹی کا ایک پتلا ہے

    کس لئے ہے تجھے غرور اتنا

    لوٹ آنا بھی اب نہیں ممکن

    جا چکا ہے وہ ہم سے دور اتنا

    موت کے وقت پاس آ جانا

    کام کرنا مرا ضرور اتنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY