پہلے نہ اڑایا کسی بیکس کے جگر کو

مرزا قادر بخش صابر دہلوی

پہلے نہ اڑایا کسی بیکس کے جگر کو

مرزا قادر بخش صابر دہلوی

MORE BYمرزا قادر بخش صابر دہلوی

    پہلے نہ اڑایا کسی بیکس کے جگر کو

    پر ہم نے لگائے ہیں ترے تیر نظر کو

    ہے تیر نگہ بزم عدو میں مری جانب

    غصے میں چھپایا ہے محبت کی نظر کو

    کیوں آتش گل باغ میں ہے تیز کہ ہم آپ

    اٹھ جائیں گے اے شبنم‌‌ شاداب سحر کو

    دن رات کا فرق ان کی محبت میں ہے اب تو

    وعدہ تو کیا شام کا اور آئے سحر کو

    دل چیز ہے کیا جان بھی دوں عشق میں صابرؔ

    میں نفع سمجھتا ہوں مدام ایسے ضرر کو

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 295)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956 )
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے