پہنائے بر و بحر کے محشر سے نکل کر

ثروت حسین

پہنائے بر و بحر کے محشر سے نکل کر

ثروت حسین

MORE BY ثروت حسین

    پہنائے بر و بحر کے محشر سے نکل کر

    دیکھوں کبھی موجود و میسر سے نکل کر

    آئے کوئی طوفان گزر جائے کوئی سیل

    اک شعلۂ بے تاب ہوں پتھر سے نکل کر

    آنکھوں میں دمک اٹھی ہے تصویر در و بام

    یہ کون گیا میرے برابر سے نکل کر

    تا دیر رہا ذائقۂ مرگ لبوں پر

    اک نیند کے ٹوٹے ہوئے منظر سے نکل کر

    ہر رنگ میں اثبات سفر چاہئے ثروتؔ

    مٹی پہ دھرو پاؤں سمندر سے نکل کر

    مآخذ:

    • کتاب : meyaar (Pg. 304)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY