پیکر عقل ترے ہوش ٹھکانے لگ جائیں

فرحت احساس

پیکر عقل ترے ہوش ٹھکانے لگ جائیں

فرحت احساس

MORE BYفرحت احساس

    پیکر عقل ترے ہوش ٹھکانے لگ جائیں

    تیرے پیچھے بھی جو ہم جیسے دوانے لگ جائیں

    اس کا منصوبہ یہ لگتا ہے گلی میں اس کی

    ہم یوں ہی خاک اڑانے میں ٹھکانے لگ جائیں

    سوچ کس کام کی رہ جائے گی تیری یہ بہار

    اپنے اندر ہی اگر ہم تجھے پانے لگ جائیں

    سب کے جیسی نہ بنا زلف کہ ہم سادہ نگاہ

    تیرے دھوکے میں کسی اور کے شانے لگ جائیں

    رات بھر روتا ہوں اتنا کہ عجب کیا اس میں

    ڈھیر پھولوں کے اگر مرے سرہانے لگ جائیں

    دشت کرنا ہے ہمیں شہر کے اک گوشے کو

    تو چلو کام پہ ہم سارے دوانے لگ جائیں

    فرحتؔ احساس اب ایسا بھی اک آہنگ کہ لوگ

    سن کے اشعار ترے ناچنے گانے لگ جائیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فرحت احساس

    فرحت احساس

    مأخذ :
    • کتاب : (shayeri Nahin hai yeh ) (Pg. 4)
    • Author : frahat ehsas
    • مطبع : (arshiya publication) ((2011) )
    • اشاعت : (2011)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY