پیمانۂ حال ہو گئے ہم

سحر انصاری

پیمانۂ حال ہو گئے ہم

سحر انصاری

MORE BYسحر انصاری

    پیمانۂ حال ہو گئے ہم

    گردش میں مثال ہو گئے ہم

    تکمیل کمال ہوتے ہوئے

    تمہید زوال ہو گئے ہم

    ہر شخص بنا ہے ناز بردار

    جب خود پہ وبال ہو گئے ہم

    دریوزہ گروں کی انجمن میں

    کشکول سوال ہو گئے ہم

    آئینۂ کرب لفظ و معنی

    فرہنگ ملال ہو گئے ہم

    امکان وجود کے سفر پر

    نکلے تو محال ہو گئے ہم

    پہلے تو رہے حقیقت افروز

    پھر خواب و خیال ہو گئے ہم

    مآخذ :
    • کتاب : namuud (Pg. 159)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY