aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

پیوستہ رہ شجر سے امید بہار رکھ

علامہ اقبال

پیوستہ رہ شجر سے امید بہار رکھ

علامہ اقبال

MORE BYعلامہ اقبال

    دلچسپ معلومات

    حصہ سوم سے 1908—( بانگ درا)

    ڈالي گئي جو فصل خزاں ميں شجر سے ٹوٹ

    ممکن نہيں ہري ہو سحاب بہار سے

    ہے لازوال عہد خزاں اس کے واسطے

    کچھ واسطہ نہيں ہے اسے برگ و بار سے

    ہے تيرے گلستاں ميں بھي فصل خزاں کا دور

    خالي ہے جيب گل زر کامل عيار سے

    جو نغمہ زن تھے خلوت اوراق ميں طيور

    رخصت ہوئے ترے شجر سايہ دار سے

    شاخ بريدہ سے سبق اندوز ہو کہ تو

    ناآشنا ہے قاعدئہ روزگار سے

    ملت کے ساتھ رابطہء استوار رکھ

    پيوستہ رہ شجر سے ، اميد بہار رکھ!

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے