Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

پرائی آگ میں جلنے کی آرزو ہے وہی

خلیل تنویر

پرائی آگ میں جلنے کی آرزو ہے وہی

خلیل تنویر

MORE BYخلیل تنویر

    پرائی آگ میں جلنے کی آرزو ہے وہی

    بدل گیا ہے مگر وحشتوں کی خو ہے وہی

    وہ شہر چھوڑ کے مدت ہوئی چلا بھی گیا

    حد افق پہ مگر چاند روبرو ہے وہی

    زمانہ لاکھ ستاروں کو چھو کے آ جائے

    ابھی دلوں کو مگر حاجت رفو ہے وہی

    قریب تھا تو سبھی اس سے بے خبر تھے مگر

    چلا گیا ہے تو موضوع گفتگو ہے وہی

    مأخذ :
    • کتاب : Gil-e-Lajvard (Pg. 127)
    • Author : Khaleel Tanveer
    • مطبع : Al-asr Publications, Ahmedabad (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے