پرسش غم کا شکریہ کیا تجھے آگہی نہیں

احسان دانش

پرسش غم کا شکریہ کیا تجھے آگہی نہیں

احسان دانش

MORE BYاحسان دانش

    پرسش غم کا شکریہ کیا تجھے آگہی نہیں

    تیرے بغیر زندگی درد ہے زندگی نہیں

    دیکھ کے خشک و زرد پھول دل ہے کچھ اس طرح ملول

    جیسے مری خزاں کے بعد دور بہار ہی نہیں

    دور تھا اک گزر چکا نشہ تھا اک اتر چکا

    اب وہ مقام ہے جہاں شکوۂ بے رخی نہیں

    عشرت خلد کے لیے زاہد کج نظر جھکے

    مشرب عشق میں تو یہ جرم ہے بندگی نہیں

    تیرے سوا کروں پسند کیا تری کائنات میں

    دونوں جہاں کی نعمتیں قیمت بندگی نہیں

    لاکھ زمانہ ظلم ڈھائے وقت نہ وہ خدا دکھائے

    جب مجھے ہو یقیں کہ تو حاصل زندگی نہیں

    دل کی شگفتگی کے ساتھ راحت مے کدہ گئی

    فرصت مے کشی تو ہے حسرت مے کشی نہیں

    اشک رواں کی آب و تاب کر نہ عوام میں خراب

    عظمت عشق کو سمجھ گریۂ غم ہنسی نہیں

    عرصۂ فرقت و فراق ایسا طویل تو نہ تھا

    بھول رہے ہو تم مجھے میں کوئی اجنبی نہیں

    زخم پہ زخم کھا کے جی اپنے لہو کے گھونٹ پی

    آہ نہ کر لبوں کو سی عشق ہے دل لگی نہیں

    ایک وہ رات تھی کہ جب تھا مرے گھر وہ ماہتاب

    ایک یہ رات ہے کہ اب چاند ہے چاندنی نہیں

    مژدہ کہ نا مراد عشق تیری غزل کا ہے وہ رنگ

    وہ بھی پکار اٹھے کہ یہ سحر ہے شاعری نہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    شفقت سلامت علی خان

    شفقت سلامت علی خان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے