پھر حریف بہار ہو بیٹھے

فیض احمد فیض

پھر حریف بہار ہو بیٹھے

فیض احمد فیض

MORE BYفیض احمد فیض

    پھر حریف بہار ہو بیٹھے

    جانے کس کس کو آج رو بیٹھے

    تھی مگر اتنی رائیگاں بھی نہ تھی

    آج کچھ زندگی سے کھو بیٹھے

    تیرے در تک پہنچ کے لوٹ آئے

    عشق کی آبرو ڈبو بیٹھے

    ساری دنیا سے دور ہو جائے

    جو ذرا تیرے پاس ہو بیٹھے

    نہ گئی تیری بے رخی نہ گئی

    ہم تری آرزو بھی کھو بیٹھے

    فیضؔ ہوتا رہے جو ہونا ہے

    شعر لکھتے رہا کرو بیٹھے

    مآخذ:

    • کتاب : Nuskha Hai Wafa (Kulliyat-e-Faiz) (Pg. 74)
    • مطبع : Educational Publishing House (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY