پھر جو کٹتی نہیں اس رات سے خوف آتا ہے

رحمان حفیظ

پھر جو کٹتی نہیں اس رات سے خوف آتا ہے

رحمان حفیظ

MORE BYرحمان حفیظ

    پھر جو کٹتی نہیں اس رات سے خوف آتا ہے

    سو ہمیں شام ملاقات سے خوف آتا ہے

    مجھ کو ہی پھونک نہ ڈالیں کہیں یہ لفظ مرے

    اب تو اپنے ہی کمالات سے خوف آتا ہے

    کٹ ہی جاتا ہے سفر سہل ہو یا مشکل ہو

    پھر بھی ہر بار شروعات سے خوف آتا ہے

    وہم کی گرد میں لپٹے ہیں سوال اور ہمیں

    کبھی نفی کبھی اثبات سے خوف آتا ہے

    ایسے ٹھہرے ہوئے ماحول میں رحمانؔ حفیظ

    ان گزرتے ہوئے لمحات سے خوف آتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 95)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY