پھر لوٹ کر گئے نہ کبھی دشت و در سے ہم

جگن ناتھ آزاد

پھر لوٹ کر گئے نہ کبھی دشت و در سے ہم

جگن ناتھ آزاد

MORE BYجگن ناتھ آزاد

    پھر لوٹ کر گئے نہ کبھی دشت و در سے ہم

    نکلے بس ایک بار کچھ اس طرح گھر سے ہم

    کچھ دور تک چلے ہی گئے بے خبر سے ہم

    اے بے خودیٔ شوق یہ گزرے کدھر سے ہم

    آزاد بے نیاز تھے اپنی خبر سے ہم

    پلٹے کچھ اس طرح سے دکن کے سفر سے ہم

    قلب و نظر کا دور بس اتنا ہی یاد ہے

    وہ اک قدم ادھر سے بڑھے تھے ادھر سے ہم

    اے کاش یہ صدا بھی کبھی کان میں پڑے

    اٹھو کہ لوٹ آئے ہیں اپنے سفر سے ہم

    دل کا چمن ہے کیف بہاراں لیے ہوئے

    گزرے تھے ایک بار تری رہگزر سے ہم

    آتا ہے اک ستارہ نظر چاند کے قریب

    جب دیکھتے ہیں خود کو تمہاری نظر سے ہم

    اس سے زیادہ دور جنوں کی خبر نہیں

    کچھ بے خبر سے آپ تھے کچھ بے خبر سے ہم

    جتنی بھی رہ گئی تھی کمی دل کے درد میں

    اتنا ہی لٹ گئے ہیں متاع نظر سے ہم

    روز ازل سے اپنی جبیں میں تڑپ رہی

    وابستہ یوں رہے ہیں ترے سنگ در سے ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY