پھر اسی دھن میں اسی دھیان میں آ جاتا ہوں

ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

پھر اسی دھن میں اسی دھیان میں آ جاتا ہوں

ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

MORE BY ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

    پھر اسی دھن میں اسی دھیان میں آ جاتا ہوں

    تجھے ملتا ہوں تو اوسان میں آ جاتا ہوں

    بے نشاں ہو رہوں جب تک تری آواز کے ساتھ

    پھر کسی لفظ سا امکان میں آ جاتا ہوں

    جسم سے جیسے تعلق نہیں رہتا کوئی

    بیشتر دیدۂ حیران میں آ جاتا ہوں

    شاخ گل سے جو ہوا ہاتھ ملاتی ہے کہیں

    اسی اثنا اسی دوران میں آ جاتا ہوں

    تو کسی صبح سی آنگن میں اتر آتی ہے

    میں کسی دھوپ سا دالان میں آ جاتا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites