پھرتا رہتا ہوں میں ہر لحظہ پس جام شراب

حکیم محمد اجمل خاں شیدا

پھرتا رہتا ہوں میں ہر لحظہ پس جام شراب

حکیم محمد اجمل خاں شیدا

MORE BYحکیم محمد اجمل خاں شیدا

    پھرتا رہتا ہوں میں ہر لحظہ پس جام شراب

    مجھ کو بد نام کرے گی ہوس جام شراب

    قافلہ عیش کا تیار ہے رندوں کے لیے

    قلقل شیشۂ مے ہے جرس جام شراب

    جنبش باد سحر سے ہے تموج مے میں

    قوت جان حزیں ہے نفس جام شراب

    خم لنڈھا دوں تو نہ چکرائے کبھی سر میرا

    ایک جرعہ میں گیا بو الہوس جام شراب

    مجھ سے پوچھو اثر بادۂ گلگوں واعظ

    میں ہوں رندوں میں بہت نکتہ رس جام شراب

    ٹکٹکی باندھ کے دیکھا کیا اتنا کہ بنا

    سایۂ مردم دیدہ مگس جام شراب

    مے نہ ہو بو ہی سہی کچھ تو ہو رندوں کے لئے

    اسی حیلہ سے بجھے گی ہوس جام شراب

    زلف مشکیں کے لیے بو جو چلی آتی ہے

    ہے نسیم سحری ہم نفس جام شراب

    ہم نے رندوں کا مقولہ یہ سنا ہے شیداؔ

    صحبت عیش میں زاہد ہے خس جام شراب

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY