پھول بکھراتی ہر اک موج ہوا آتی ہے

صابر دت

پھول بکھراتی ہر اک موج ہوا آتی ہے

صابر دت

MORE BY صابر دت

    پھول بکھراتی ہر اک موج ہوا آتی ہے

    آپ آتے ہیں کہ گلشن میں صبا آتی ہے

    آپ کے رخ سے برستا ہے سحر کا جوبن

    آپ کی زلف کے سائے میں گھٹا آتی ہے

    آپ کے ہاتھ جو چھو جائیں کسی ڈالی سے

    گل ہی کیا خار سے بھی بوئے حنا آتی ہے

    آپ لہرا کے نہ یوں دودھیا آنچل کو چلیں

    مسکراتے ہوئے پھولوں کو حیا آتی ہے

    آپ کو کیوں نہ تراشا گیا میرے دل سے

    سنگ مرمر سے ہمیشہ یہ صدا آتی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Mauje Aariz (Pg. 81)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY