پھول کا کھلنا بہت دشوار ہے

زہیر کنجاہی

پھول کا کھلنا بہت دشوار ہے

زہیر کنجاہی

MORE BYزہیر کنجاہی

    پھول کا کھلنا بہت دشوار ہے

    موسم گل آج کل بیمار ہے

    بے وسیلہ بات بن سکتی نہیں

    مل گئی کشتی تو دریا پار ہے

    آنسوؤں کا اور مطلب کچھ نہیں

    مختصر سی صورت اظہار ہے

    دوستی کا راز افشا کر گئی

    دشمنی بھی اک بڑا کردار ہے

    ہم سفینے کے لئے اک بوجھ ہیں

    ہم اگر ڈوبے تو بیڑا پار ہے

    زندگی کی رزم گاہوں میں زہیرؔ

    سرفروشی آخری تیوہار ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Dariche (Pg. 43)
    • Author : Bashir Saifi
    • مطبع : Shakhsar Publishers (1975)
    • اشاعت : 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY